عنوان: بیٹے کی شادی پر ولیمہ کرنے کی نذر ماننا(9074-No)

سوال: مفتی صاحب ! ایک آدمی نے یہ نذر مانی کہ وہ اپنے بیٹے کا ولیمہ کریگا، لیکن پھر یہ بات ان کے ذہن سے نکل گئی، اس کے انتقال کے بعد اس کے بیٹے کو یہ بات یاد آئی ہے، اب اس کے لئے کیا حکم ہے؟

جواب: پوچھی گئی صورت میں اگر مرحوم نے اس سلسلے میں کوئی وصیت نہیں کی ہے، تو اس کی طرف سے اس کے بیٹے پر کچھ لازم نہیں ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

السراجی فی المیراث: (ص: 2، ط: مطبع علمی)
تتعلق بترکۃ المیت حقوق اربعۃ مرتبۃ، الاول یبدأ بتکفینہ وتجہیزہ من غیر تبذیر و لا تقتیر،ثم تقضی دیونہ من جمیع مابقی من مالہ، ثم تنفذ وصایاہ من ثلث مابقی بعد الدین، ثم یقسم الباقی بین ورثتہ بالکتاب والسنۃ واجماع الامۃ۔

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 169
bete / son / bachey ki shadi per / par walifa karne / karney ki nazar manna

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Ruling of Oath & Vows

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2022.