عنوان: ایک شخص کی دو بیویوں کے سابقہ شوہروں سے اولاد کے درمیان نکاح کا شرعی حکم(109122-No)

سوال: میں نے ایک بیوہ سے شادی کی، پہلے خاوند سے اس کے دو بچے ایک بیٹا ایک بیٹی ہے، پھر میں نے دوسری بیوہ سے شادی کی، اس کے پہلے خاوند سے ایک بیٹا اور ایک بیٹی ہے، اب دونوں بیویوں کی اولاد موجودہ صورتحال میں ایک دوسرے سے نکاح اور شادی کرسکتی ہے یا نہیں؟

جواب: سوال میں ذکر کردہ صورت میں آپ کی دونوں بیویوں کے سابقہ شوہروں سے جو اولاد ہیں، ان کا آپس میں نکاح شرعاً جائز ہے، بشرطیکہ ان کے درمیان نکاح کی حرمت کی کوئی اور وجہ (مثلاً: رضاعت وغیرہ) موجود نہ ہو۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

بدائع الصنائع: (فصل المحرمات بالمصاهرة بنت الزوجة وبناتها، 259/2، ط: دار الكتب العلمية)
وأما الفرقة الثانية: فبنت الزوجة وبناتها وبنات بناتها وبنيها وإن سفلن.
أما بنت زوجته فتحرم عليه بنص الكتاب العزيز إذا كان دخل بزوجته فإن لم يكن دخل بها فلا تحرم لقوله: {وربائبكم اللاتي في حجوركم من نسائكم اللاتي دخلتم بهن فإن لم تكونوا دخلتم بهن فلا جناح عليكم} [النساء: 23] وسواء كانت بنت زوجته في حجره أو لا عند عامة العلماء.

الهندية: (القسم الثاني المحرمات بالصهرية، 277/1، ط: دار الفکر)
لا بأس بأن يتزوج الرجل امرأة ويتزوج ابنه ابنتها أو أمها، كذا في محيط السرخسي.

کذا فی فتاوی دار العلوم دیوبند: رقم الفتوی: 678-697/H =8/1437

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 145
aik shakhs ki 2 / two biwio / biweo / wifes k / kay sabqa shoharon / husbands / khawando se / say olad / bache / bachey k / kay darmian / darmyan nikah ka shari / sharae hokom / hokum

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Nikah

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2022.