عنوان: بیرون ملک میں مقیم شخص کے لیے فدیہ پاکستان میں ادا کرنے کا حکم (109426-No)

سوال: السلام علیکم، مفتی صاحب! روزے کا فدیہ کس طرح ادا ہو گا؟ جیسے: کوئی بیرون ملک رہتا ہے، اور فدیہ پاکستان میں ادا کرنا چاہتا ہو، تو کیا وہ پاکستانی قیمتوں کے مطابق اپنا بیرون ملک قضا روزوں کا فدیہ دے گا؟

جواب: فدیہ کی مقدار (گندم کے اعتبار سے) پونے دو کلو گندم ہے، چاہے جہاں بھی ادا کیا جائے، اگر قیمت ادا کرنی ہو، تو جہاں ادائیگی کرنے والا موجود ہو، وہاں کی قیمت کا اعتبار ہوگا۔
لہذا مذکورہ صورت میں آپ جس ملک میں مقیم ہیں، تو فدیہ اسی ملک کی قیمت کے مطابق ادا کرنا لازم ہے، خواہ وہ رقم آپ اسی میں ادا کریں یا پاکستان میں کوئی آپ کی اجازت سے ادا کرے۔

نیز واضح رہے کہ قضاء روزوں کا فدیہ زندگی میں ادا کرنے کی اجازت اس شخص کے لیے ہے، جو اتنا بوڑھا ہو چکا ہو، یا ایسا بیمار ہو کہ وہ روزہ نہ رکھ سکتا ہو اور مستقبل میں اس کے صحت یاب ہونے کی کوئی امید نہ ہو، تو ایسا شخص اپنے روزوں کے بدلے فدیہ دے سکتا ہے۔
البتہ فدیہ ادا کرنے کے بعد اگر وہ کسی وقت روزہ رکھنے پر قادر ہو جاتا ہے، تو اس کو قضاء کرنا لازم ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

رد المحتار: (355/2، ط: دار الفکر)
قوله: مكان المؤدي) أي لا مكان الرأس الذي يؤدي عنه (قوله: وهو الأصح) بل صرح في النهاية والعناية بأنه ظاهر الرواية كما في الشرنبلالية وهو المذهب كما في البحر فكان أولى مما في الفتح من تصحيح قولهما باعتبار مكان المؤدى عنه.
قال الرحمتي:وقال في المنح في آخر باب صدقة الفطر: الأفضل أن يؤدي عن عبيده وأولاده وحشمه حيث هم عند أبي يوسف وعليه الفتوى وعند محمد حيث هو اه تأمل. قلت: لكن في التتارخانية يؤدى عنهم حيث هو وعليه الفتوى وهو قول محمد ومثله قول أبي حنيفة وهو الصحيح.

الدر المختار: (427/2، ط: دار الفکر)
(وللشيخ الفاني العاجز عن الصوم الفطر ويفدي) وجوبا ولو في أول الشهر وبلا تعدد فقير كالفطرة لو موسرا وإلا فيستغفر الله هذا إذا كان الصوم أصلا بنفسه وخوطب بأدائه، حتى لو لزمه الصوم لكفارة يمين أو قتل ثم عجز لم تجز الفدية لأن الصوم هنا بدل عن غيره، ولو كان مسافرا فمات قبل الإقامة لم يجب الإيصاء، ومتى قدر قضى لأن استمرار العجز شرط الخلفية.

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 547
out of country / beron mulk / beroon mulk me / mein muqeem shakhs k / kay liye fidya pakistan me / mein ada karne ka hokom / hokum

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Zakat-o-Sadqat

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2022.