عنوان: جس لاکٹ میں ایک آنکھ بنی ہو، اسے پہن کر عورت کی نماز کا حکم(9467-No)

سوال: السلام علیکم، مفتی صاحب! کیا آنکھ والا لاکٹ نماز اور نماز کے علاوہ پہن سکتے ہیں؟

جواب: سوال میں ذکر کردہ صورت میں چونکہ لاکٹ میں صرف ایک آنکھ بنی ہوئی ہے، ذی روح کی پوری تصویر نہیں ہے، لہذا عورت کے لیے ایسا لاکٹ پہننا جائز ہے، بشرطیکہ ایسے مخصوص لاکٹ سے متعلق اس عورت کا کوئی غلط عقیدہ نہ ہو، ایسی صورت میں اس لاکٹ میں نماز پڑھنا بھی جائز ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

الدر المختار: (647/1، ط: دار الفکر)
لا يكره (لو كانت تحت قدميه) أو محل جلوسه لأنها مهانة (أو في يده) عبارة الشمني بدنه لأنها مستورة بثيابه (أو على خاتمه) بنقش غير مستبين... (أو كانت صغيرة) لا تتبين تفاصيل أعضائها للناظر قائما وهي على الأرض، ذكره الحلبي (أو مقطوعة الرأس أو الوجه)۔

اعلاء السنن: (294/17، ط: بیروت)
يباح للنساء من حلي الذهب والفضة والجواهر كل ما جرت عادتهن يلبسه كالسوار والخلخال والقرط والخاتم وما يلبسه علي وجوههن وفي أعناقهن وأرجلهن وأذانهن وغيره.

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 112
jis locket / lacket me / mein aik / one ankh / eye bani ho, usey pehen kar orat / lady ki namaz parhne ka hokom / hokum

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Salath (Prayer)

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2022.