عنوان: آب زم زم میں عام پانی ملا كر اسے آب زم زم کہنے کا حکم(9522-No)

سوال: السلام علیکم، مفتی صاحب! کیا یہ بات درست ہے کہ زم زم کا پانی ملانے سے عام پانی بھی زم زم بن جاتا ہے؟ رہنمائی فرمادیں۔

جواب: آبِ زم زم میں عام پانی ملانے سے اس کی برکات عام پانی میں بھی منتقل ہو جاتی ہیں،اس لیے آبِ زم زم جس پانی میں ملایا جائے، اگر وہ پانی تھوڑا ہو، اور آب زم زم کی مقدار زیادہ ہو، تو اس پورے پانی کو آبِ زم زم کہا جاسکتا ہے، لیکن اگر عام پانی کی مقدار آبِ زم زم سے زیادہ ہو، تو اسے آب زمزم کہنا درست نہیں ہے، تاہم ایسا پانی بھی برکت سے خالی نہیں ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

الهداية: (218/1، ط: دار احياء التراث العربي)
وإذا ‌اختلط ‌اللبن بالماء واللبن هو الغالب تعلق به التحريم وإن غلب ‌الماء لم يتعلق به التحريم، خلافا للشافعي رحمه الله هو يقول إنه موجود فيه حقيقة ونحن نقول المغلوب غير موجود حكما حتى لا يظهر في مقابلة الغالب كما في اليمين.

کذا فی فتاوی دار العلوم دیوبند: رقم الفتوی: 468-417/M=05/1440

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 1693 May 26, 2022
aab e zam zam / aabe zam zam me / mein aam pani mila kar usey aab e zam zam / aabe zam zam kehne ka hokom / hokum

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Hajj (Pilgrimage) & Umrah

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.