عنوان: خلوتِ صحیحہ کب ثابت ہوتی ہے؟(9773-No)

سوال: خلوتِ صحیحہ کسے کہتے ہیں؟ میں نے سنا ہے کہ اگر ہمبستری یا جماع نہ ہوا ہو تو خلوتِ صحیحہ نہیں کہلائی گی۔ کیا یہ بات درست ہے؟

جواب: واضح رہے کہ "خلوت صحیحہ" سے مراد یہ ہے کہ شوہر اور بیوی دونوں ایسی جگہ میں تنہا جمع ہو جائیں، جہاں ازدواجی تعلقات قائم کرنے میں کوئی حسی، شرعی یا طبعی مانع نہ ہو، اگرچہ ایسی تنہائی کے باوجود ازدواجی تعلق قائم نہ کیا ہو، پھر بھی خلوت صحیحہ ثابت ہو جاتی ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

الفتاوي الهندية: (304/1، ط: دار الفکر)
"وَالْخَلْوَةُ الصَّحِيحَةُ أَنْ يَجْتَمِعَا فِي مَكَان لَيْسَ هُنَاكَ مَانِعٌ يَمْنَعُهُ مِنْ الْوَطْءِ حِسًّا أَوْ شَرْعًا أَوْ طَبْعًا، كَذَا فِي فَتَاوَى قَاضِي خَانْ".

الدر المختار: (114/3، ط: دار الفکر)
"( والخلوة ) مبتدأ خبره قوله الآتي: كالوطء ( بلا مانع حسي ) كمرض لأحدهما يمنع الوطء ( وطبعي ) كوجود ثالث عاقل، ذكره ابن الكمال وجعله في الأسرار من الحسي، وعليه فليس للطبعي مثال مستقل ( وشرعي ) كإحرام لفرض أو نفل".

واللہ تعالی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 1442 Aug 17, 2022
khalwate sahiha kab sabit hoti hay / he?

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Nikah

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.