عنوان: نکاح کے قبول میں "ان شاء اللہ" کہنا(9883-No)

سوال: ایک قاضی صاحب نے نکاح پڑھاتے ہوئے لڑکی کے والد سے پوچھا کہ کیا آپ نے اپنی بیٹی فلاں کے نکاح میں دی تو والد نے جواب میں کہا کہ "جی دی ان شاءاللہ" تو کیا والد کا ایسے کہنے سے نکاح منعقد ہوگیا ہے؟

جواب: واضح رہے کہ نكاح کو قبول كرتے وقت ایجاب یا قبول کے الفاظ کے ساتھ متصلاً ان شاء الله کہنے سے نکاح منعقد نہیں ہوتا، لہٰذا پوچھی گئی صورت میں یہ نکاح منعقد نہیں ہوا، دوبارہ درست طریقے سے نکاح کرنا لازم ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

رد المحتار: (371/3، ط: دار الفكر)

(قوله فإنه تطليق إلخ) اعلم أن ‌التعليق ‌بمشيئة ‌الله تعالى إبطال عندهما: أي رفع لحكم الإيجاب السابق وعند أبي يوسف تعليق ... ولهما أنه لا طريق للوصول إلى معرفة مشيئته تعالى فكان إبطالا، بخلاف بقية الشروط، وعلى كل لا يقع الطلاق في مثل أنت طالق إن شاء الله تعالى، نعم تظهر ثمرة الخلاف في مواضع .... إلخ

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 853 Oct 20, 2022
nikah k qubol me / mein "insha Allah kehna"

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Nikah

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.