عنوان: شکر ادا کرنے کا طریقہ(9896-No)

سوال: اللہ تعالی کا شکر ادا کرنے کا مسنون طریقہ کیا ہے، کیا صرف "الحمدللہ" کہنا بھی شکر ادا کرنا ہے؟

جواب: شکر کسی نعمت اور خوشی کے ملنے پر یا کسی مصیبت کے ٹل جانے پر کیا جاتا ہے اور یہ حضور صلی اللہ علیہ وسلم اور صحابہ کرام سے ثابت ہے، زبان سے "الحمد للہ" کہہ دیا جائے یا یہ کہہ دیا جائے کہ "اے اللہ آپ کا شکر ہے" یا دو رکعت نفل پڑھ کر اللہ تعالی کا شکر ادا کر لیا جائے یا صرف سجدہ شکر ادا کرلیا جائے یا اللہ کے راستہ میں صدقہ دے دیا جائے، ان تمام طریقوں کے ذریعے شکر بجا لایا جا سکتا ہے، اس کے علاؤہ اللہ کی اطاعت میں مزید اضافہ کرنا اور اس کے منع کیے ہوئے کاموں سے بچنا، یہ بھی شکر کی ایک قسم ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

الفتاوی الھندیة: (135/1، 136، ط: دار الفکر، بیروت)

[مسائل سجدة الشكر] وقال أبو يوسف ومحمد رحمهما الله تعالى هي قربة يثاب عليها وصورتها عندهما أن من تجددت عنده نعمة ظاهرة أو رزقه الله تعالى ولدا أو مالا أو وجد ضالة أو اندفعت عنه نقمة أو شفي مريض له أو قدم له غائب يستحب له أن يسجد شكرا لله تعالى مستقبل القبلة يحمد الله فيها ويسبحه ثم يكبر أخرى فيرفع رأسه كما في سجدة التلاوة، كذا في السراج الوهاج.
قال في الحجة: ولا يمنع العباد من سجدة الشكر لما فيها من الخضوع والتعبد وعليه الفتوى، كذا في التتارخانية ويكره أن يسجد شكرا بعد الصلاة في الوقت الذي يكره فيه النفل ولا يكره في غيره، كذا في القنية.
وأما إذا سجد بغير سبب فليس بقربة ولا مكروه وما يفعل عقيب الصلوات مكروه؛ لأن الجهال يعتقدونها سنة أو واجبة وكل مباح يؤدي إليه فمكروه، هكذا في الزاهدي.

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 472
shukar ada karne ka tariqa

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Azkaar & Supplications

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2023.