عنوان: کسی نامحرم لڑکے کی طرف سے حجِ بدل ادا کرنا یا عمرے کا ثواب کسی نامحرم لڑکے کو بخشنا (10126-No)

سوال: مسئلہ یہ معلوم کرنا ہے کہ کیا کوئی غیر محرم لڑکی کسی غیر محرم لڑکے کی طرف سے عمرہ بدل یا حج بدل کر سکتی ہے؟

جواب: یاد رہے کہ حج کا تو بدل ہوتا ہے، لیکن عمرے کا بدل نہیں ہوتا، البتہ عمرہ کرکے اس کا ثواب کسی مسلمان کو بخشا جاسکتا ہے۔
سوال میں پوچھی گئی صورت میں لڑکی کسی نامحرم لڑکے کی طرف سے حجِ بدل ادا کرسکتی ہے، بشرطیکہ اپنے شوہر یا محرم کے ساتھ جائے، البتہ بہتر یہ ہے کہ لڑکی کے بجائے کسی لڑکے کو حج بدل کے لئے بھیجا جائے۔
اسی طرح لڑکی عمرہ کرنے کے بعد اسکا ثواب کسی مسلمان لڑکے کو بخش سکتی ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

الفتاوی الھندیة: (257/1، ط: دار الفکر)
وفي الكرماني الأفضل أن يكون عالما بطريق الحج وأفعاله، ويكون حرا عاقلا بالغا، كذا في غاية السروجي شرح الهداية.
ولو أحج عنه امرأة أو عبدا أو أمة بإذن السيد جاز ويكره هكذا في محيط السرخسي.

رد المحتار: (465/2، ط: دار الفکر)
أن وجود الزوج أو المحرم شرط وجوب أم شرط وجوب أداء والذي اختاره في الفتح أنه مع الصحة وأمن الطريق شرط وجوب الأداء فيجب الإيصاء إن منع المرض، وخوف الطريق أو لم يوجد زوج، ولا محرم

شرح العقائد: (ص: 122، ط: مکتبة علوم اسلامیة، بشاور)
وفی دعاء الاحیاء للاموات وصدقتھم ای صدقة الاحیاء عنھم ای عن الاموات نفع لھم ای للاموات۔

واللّٰه تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 599 Dec 29, 2022
kisi namehram larke / larkay ki taraf se / say hajje / hajj e badal ada karna ya umrah/ umray ka sawab kisi namehram larke / larkay ko bakhashna / bakhsh na

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Hajj (Pilgrimage) & Umrah

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.