عنوان: آمدنی میں سے ایک مخصوص حصہ صدقہ کرنا(10227-No)

سوال: حضرت! اس بات کی رہنمائی فرمائیں کہ ماہانہ تنخواہ سے کچھ مخصوص رقم نکال کر صدقہ کرنا سنت سے یا اسلاف کے طرزِ عمل سے ثابت ہے یا اپنی حیثیت کے مطابق جتنی مرضی صدقہ نکال سکتے ہیں؟

جواب: زکوٰۃ اور فطرانہ کے علاوہ شریعت میں فیصد کے اعتبار سے صدقہ کی کوئی خاص حد مقرر نہیں ہے، ہر انسان اپنی وسعت کی حد تک جتنا صدقہ کرے وہ اس کے لیے باعثِ اجر و ثواب ہے، البتہ اگر انتظامی طور پر کوئی شخص اپنی آمدنی میں صدقہ کے لیے خاص تناسب کی تعیین کرتا ہے اور ہر ماہ اسی تناسب سے صدقہ دیتا ہے تو ایسا کرنا بھی درست بلکہ اچھا ہے، کیونکہ اس طرح اس کی پوری آمدنی میں سے ایک خاص تناسب صدقہ کی مد میں یقینی طور پر نکلتا رہے گا۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

القرآن الكريم: (البقرة، الآية: 254)

يَٰٓأَيُّهَا ٱلَّذِينَ ءَامَنُوٓاْ ‌أَنفِقُواْ مِمَّا رَزَقۡنَٰكُم مِّن قَبۡلِ أَن يَأۡتِيَ يَوۡمٞ لَّا بَيۡعٞ فِيهِ وَلَا خُلَّةٞ وَلَا شَفَٰعَةٞۗ وَٱلۡكَٰفِرُونَ هُمُ ٱلظَّٰلِمُونَ o

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 325 Feb 08, 2023
amadni / income me / mein se / say aik makhsos / makhsoos hisa / hissa / raqam sadqa karna

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Zakat-o-Sadqat

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.