عنوان: تین تولہ سونا، برتن اور فریج پر زکوٰۃ کا حکم(10296-No)

سوال: میرے پاس تین تولہ سونا ہے، جو میرا حق مہر ہے، اور میرے پاس کچھ برتن اور ایک فریج ہے، جو مجھے جہیز میں ملا تھا، لیکن ابھی یہ استعمال میں نہیں ہے، البتہ میرے پاس پیسے نہیں ہیں تو کیا مجھ پر ان چیزوں کی زکوۃ ادا کرنا فرض ہے؟

جواب: استعمال کے برتنوں اور فریج پر زکوٰۃ لازم نہیں ہوتی، جہاں تک تین تولہ سونے کا تعلق ہے تو اگر واقعتا سونے کے علاوہ آپ کی ملکیت میں چاندی، تجارتی مال یا معمولی سی رقم بھی نہ ہو تو فقط تین تولہ سونے پر زکوٰۃ لازم نہیں ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

بدائع الصنائع: (18/2، ط: دار الكتب العلمية)

فأما إذا كان له ذهب مفرد فلا شيء فيه حتى يبلغ عشرين مثقالا فإذا بلغ عشرين مثقالا ففيه نصف مثقال؛ لما روي في حديث عمرو بن حزم «والذهب ما لم يبلغ قيمته مائتي درهم فلا صدقة فيه فإذا بلغ قيمته مائتي درهم ففيه ربع العشر» وكان الدينار على عهد رسول الله - صلى الله عليه وسلم - مقوما بعشرة دراهم.
وروي عن النبي - صلى الله عليه وسلم - أنه قال لعلي: «ليس عليك في الذهب زكاة ما لم يبلغ عشرين مثقالا فإذا بلغ عشرين مثقالا ففيه نصف مثقال.

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 488 Feb 27, 2023
teen tola sona / gold,bartan or fridge per zakat ka hokom / hokum

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Zakat-o-Sadqat

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.