عنوان: اذان دیتے ہوئے کچھ کلمات کے چھوٹ جانے کا حکم (10346-No)

سوال: اذان دیتے ہوئے کوئی کلمہ بھول کر رہ جائے تو اذان ختم ہونے کے بعد کیا کریں؟ اور اگر درمیان میں یاد آجائے تو اس وقت کیا حکم ہے؟

جواب: واضح رہے کہ اگر مؤذن سے دورانِ اذان کوئی جملہ رہ جائے اور اذان کے درمیان یا اذان کے آخر میں یاد آجائے تو اس جملہ کو ادا کرنے کے بعد اس کے بعد والے کلماتِ اذان کا بھی اعادہ کرے، البتہ اگر اذان کہنے کے کافی دیر بعد یاد آئے تو پھر دوبارہ اذان دینے کی ضرورت نہیں، وہی سابقہ اذان کافی ہوجائے گی۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

الفتاویٰ الھندیة: (56/1، ط: دار الفکر)
ويرتب بين كلمات الأذان والإقامة كما شرع. كذا في محيط السرخسي۔
وإذا قدم في أذانه أو في إقامته بعض الكلمات على بعض نحو أن يقول: أشهد أن محمدا رسول الله قبل قوله: أشهد أن لا إله إلا الله فالأفضل في هذا أن ما سبق على أوانه لا يعتد به حتى يعيده في أوانه وموضعه وإن مضى على ذلك جازت صلاته كذا في المحيط۔

واللّٰه تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی

Print Full Screen Views: 1468 Mar 08, 2023
azan / aazan dete / detay huwe kuch kalmat / kalimat k choot / chot jane / janay ka hukum / hokom

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Salath (Prayer)

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.