عنوان: "جب تک نابالغ بچے کی قبر پر ماں نہ آئے تو فرشتے اس کے روپ میں آتے ہیں" اس بات کی شرعی حیثیت (10416-No)

سوال: عام لوگوں کا کہنا ہے کہ جب تک والدہ مرحوم بچوں کی قبر پر نہیں جاتی، فرشتے والدہ کے روپ میں بچوں سے ملنے آتے ہیں اور والدہ کے قبر پر جانے کے بعد فرشتے اس روپ میں نہیں آتے۔ اس میں کتنی صداقت ہے؟ رہنمائی فرمادیں۔

جواب: واضح رہے کہ اس بات "جب تک والدہ مرحوم بچوں کی قبر پر نہیں جاتی فرشتے والدہ کے روپ میں بچوں سے ملنے آتے ہیں" کی شریعت میں کوئی حقیقت نہیں ہے، اور یہ بات شرعا کیسے درست ہو سکتی ہے، جبکہ خواتین کو قبرستان جانے سے شریعت میں منع کیا گیا ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

رد المحتار: (باب صلاۃ الجنازۃ، 242/2، ط: دار الفکر)

"والأصح أن الرخصة ثابتة لهن بحر، وجزم في شرح المنية بالكراهة لما مر في اتباعهن الجنازة. وقال الخير الرملي: إن كان ذلك لتجديد الحزن والبكاء والندب على ما جرت به عادتهن فلا تجوز، وعليه حمل حديث "لعن الله زائرات القبور". وإن كان للاعتبار والترحم من غير بكاء والتبرك بزيارة قبور الصالحين فلا بأس إذا كن عجائز. ويكره إذا كن شواب كحضور الجماعة في المساجد اه وهو توفيق حسن"۔

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 379 May 01, 2023
jab tak nabaliqh bachey / bachay ki qabar per maa / walida na aai / aaey too farishtey us k roop me / mein aatey hain?is baat ki shari/ sharae haisiat / haysiat

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Beliefs

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.