عنوان: مدرسہ اور مکتب کى تعمیر میں نفلى صدقات لگانے کا حکم (10431-No)

سوال: مسٸلہ یہ ہے کہ ایک مولوی صاحب ایک غیر اقامتی مدرسہ یعنی مکتب کھولنا چاہ رہے ہیں، ایک صاحب نے عارضی طور پر انہیں مکتب کے لیے زمین دے دی ہے، لیکن اس پر عمارت بنانی ہے، تعمیر کے لیے مولوی صاحب زکوٰۃ کے علاوہ نفلی صدقات ایصال ثواب کے نام پر جمع کررہے ہیں تو کیا اس رقم سے غیر اقامتی مدرسے کی تعمیر کرنا درست ہے؟

جواب: جى ہاں! مدرسہ یا مکتب کى تعمیر کے لیے نفلی صدقات جمع کرنا اور انہیں مکتب کی تعمیر میں خرچ کرنا جائز ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

البحر الرائق: (كتاب الزكاة، باب مصرف الزكاة، 263/2، ط: دار الكتاب الإسلامي)
"وقيد بالزكاة، لأن النفل يجوز للغني كما للهاشمي، وأما بقية الصدقات المفروضة والواجبة كالعشر والكفارات والنذور وصدقة الفطر فلا يجوز صرفها للغني لعموم قوله - عليه الصلاة والسلام - «لا تحل صدقة لغني» خرج النفل منها؛ لأن الصدقة على الغني هبة كذا في البدائع".

الفتاوى الھندیة: (کتاب الزکاۃ، الباب السابع فی المصارف، 188/1، ط: رشیدیه)
" لا يجوز أن يبني بالزكاة المسجد، وكذا القناطر والسقايات، وإصلاح الطرقات، وكري الأنهار والحج والجهاد، وكل ما لا تمليك فيه، ولا يجوز أن يكفن بها ميت، ولا يقضى بها دين الميت كذا في التبيين".

واللہ تعالیٰ اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 317 May 02, 2023
madrasa or maktab ki tameer me / mein nafli sadqat lagane ka hokom / hokum

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Zakat-o-Sadqat

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.