عنوان: رہائشی مکان فروخت کرنے پر اس کی زکاۃ کا حکم(10475-No)

سوال: اگر ایک آدمی رہائش کے لیے بنایا گھر کسی مجبوری کی وجہ سے فروخت کردے، یا جس گھر میں رہائش پذیر ہے وہ گھر فروخت کردے تو کیا اس پر زکاۃ ادا کرنا واجب ہوگی؟

جواب: واضح رہے کہ جو مکان تجارت کی نیت سے نہ خریدا گیا ہو، بلکہ رہائش وغیرہ کے لیے خریدا گیا ہو تو اس پر زکوة واجب نہیں ہے، لہذا اگر کوئی شخص ایسا مکان فروخت کردے تو اس مکان سے حاصل شدہ قیمت کو دیگر اموالِ زکوۃ (سونا، چاندی، نقد رقم اور مالِ تجارت) کے ساتھ ملایا جائے گا۔
اس صورت میں اگر آدمی پہلے سے صاحب نصاب ہو تو زکوۃ کی تاریخ آنے پر کل اموال زکوۃ ( بشمول مکان کی قیمت) کی زکوۃ ادا کرنا واجب ہوگی اور اگر آدمی پہلے سے صاحبِ نصاب نہ ہو، بلکہ مذکورہ مکان کی قیمت ملنے کے بعد صاحب نصاب بنا ہو تو سال گزرنے کے بعد اس پر کل اموال زکوۃ کی زکوۃ ادا کرنا واجب ہوگی۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

الدر المختار: (265/2، ط: دار الفکر)
(ولا في ثياب البدن)۔۔(وأثاث المنزل ودور السكنى ونحوها) وكذا الكتب وإن لم تكن لأهلها إذا لم تنو للتجارة۔۔۔۔۔۔۔۔(وشرطه) أي شرط افتراض أدائها (حولان الحول)۔۔۔۔۔۔(أو نية التجارة) في العروض، إما صريحا ولا بد من مقارنتها لعقد التجارة كما سيجيء، أو دلالة بأن يشتري عينا بعرض التجارة أو يؤاجر داره التي للتجارة بعرض

و فیه ایضاً: (باب زکوٰۃ الغنم، 214/3)
"والمستفاد ولو بھبة أو إرث وسط الحول یضم إلی نصاب من جنسه فیزکیه بحول الأصل ".

واللّٰه تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 304 May 09, 2023
rihaishi / rehaeshe makan / ghar farokht karne / karney per us / is ki zakat ka hokom /hokum

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Zakat-o-Sadqat

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.