عنوان: کسی شخص سے قرض پر رقم لے کر پھر اسی کے ساتھ ان پیسوں کے ذریعے کاروبار میں شراکت داری کرنا (10559-No)

سوال: اگر کسی شخص سے کاروبار کے لیے قرضہ لیا جائے تو کیا اسی کے پاس کاروبار کے لیے قرضے کے پیسے لگانا جائز ہے؟

جواب: کسی شخص سے قرض کے طور پر رقم لے کر پھر اسی شخص کے ساتھ ان پیسوں کے ذریعے کاروبار میں شراکت کرنا شرعا درست ہے، بشرطیکہ یہ دونوں معاملے (قرض اور کاروبار میں شرکت) الگ الگ ہوں، ایک دوسرے کے ساتھ مشروط نہ ہوں، اور کاروبار میں شراکت داری کے شرعی تقاضوں کو پورا کیا جائے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

فقه البیوع: (507/1، ط: مکتبة معارف القرآن)

وعلی أساس هذا الحدیث ذهب جمهور العلماء الی أن اشتراط صفقة فی صفقة اخری لایجوز. قال ابن قدامة: وھکذا کل ما فی معنی ھذا، مثل أن یقول بعتك داری هذه علی أن أبیعك داری الاخری بکذا أو علی أن تبیعنی دارك أو علی أن أوجرك أو علی أن تؤجرنی کذا

واللّٰه تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 604 May 25, 2023
kisi shakhs se / say qarz per raqam le / lay kar phir usi / ussi k sath in paiso k zarye karobar me / mein shirakat dari karna

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Loan, Interest, Gambling & Insurance

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.