عنوان: قربانی کا اچھا جانور بتانے پر کمیشن لینا(10567-No)

سوال: ایک شخص کہتا ہے کہ مجھے قربانی کا اچھا جانور معلوم ہے لیکن مجھے کمیشن دوگے تو جانور کے مالک کا پتا بتاو نگا، کیا اس شخص کو کمیشن دینا جائز ہے؟ اور اس سے قربانی پر تو اثر نہیں پڑے گا؟

جواب: پوچھی گئی صورت میں اگر اس شخص نے اچھے جانور تلاش کرنے کے لیے کچھ نہ کچھ محنت بھی کی ہو، مثلا جانور دلانے کے لیے ساتھ چلا جائے تو اس کا کمیشن لینا ناجائز نہیں ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

رد المحتار: (63/6، ط: الحلبي)

قال في التتارخانية: وفي ‌الدلال والسمسار يجب أجر المثل، وما تواضعوا عليه أن في كل عشرة دنانير كذا فذاك حرام عليهم. وفي الحاوي: سئل محمد بن سلمة عن أجرة السمسار، فقال: أرجو أنه لا بأس به وإن كان في الأصل فاسدا لكثرة التعامل وكثير من هذا غير جائز، فجوزوه لحاجة الناس إليه كدخول الحمام وعنه قال: رأيت ابن شجاع يقاطع نساجا ينسج له ثيابا في كل سنة.

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 662 Jun 04, 2023
qurbani ka acha janwar batane /bataney per commission lena

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Employee & Employment

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.