عنوان: گاڑی رینٹ پر لینے والے سے گاڑی کی سروس کے اخراجات لینے کا حکم (10682-No)

سوال: اگر میں کسی کو گاڑی رینٹ پر دوں، پھر جب وہ مجھے واپس کرے تو اس وقت گاڑی گندی ہو تو کیا میں اس سے گاڑی کی سروس کے پیسے لے سکتا ہوں؟

جواب: واضح رہے کہ گاڑی رینٹ پر دینے کے بعد ایسے تمام اخراجات جو معمول کے مطابق ہوں، ان کا ادا کرنا گاڑی رینٹ پر لینے والے (Lessee) کے ذمہ ہوتا ہے۔
لہذا پوچھی گئی صورت میں چونکہ گاڑی کی سروس کا خرچہ معمول کے اخراجات میں سے ہے، لہذا گاڑی رینٹ پر لینے والا اگر آپ کو گاڑی گندی واپس کرکے دے تو آپ کے لیے اس سے سروس کے اخرجات لینا جائز ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

الهندية: (455/4، ط: دار الفكر بيروت )
قال نفقة المستأجر على الآجر سواء كانت الأجرة عينا أو منفعة كذا في المحيط.

رد المحتار: (80/6، ط: سعيد)
وفي البزازية: ولو امتلأ مسيل الحمام فعلى المستأجر تفريغه ظاهرا كان أو باطنا اه. وفيها وتسييل ماء الحمام وتفريغه على المستأجر وإن شرط نقل الرماد والسرقين رب الحمام على المستأجر لا يفسد العقد، وإن شرط على رب الحمام فسد اه فتأمل، ولعله مفرع على القياس أو مبني على العرف ففي البزازية: وفي استئجار الطاحونة في كرى نهرها يعتبر العرف، وفيها خرج المستأجر من البيت وفيه تراب أو رماد على المستأجر إخراجه بخلاف البالوعة، وإن اختلفا في التراب الطاهر فالقول للمستأجر أنه استأجرها وهو فيه.

واللّٰه تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 332 Jul 11, 2023
gari / car rent per lene wale se / say gari / car ki service k ikhrajat /kharch / expence lene ka hokom /hokum

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Employee & Employment

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.