عنوان: غیر مسلم شیف کا پکایا ہوا چکن کھانے کا حکم(10998-No)

سوال: اگر کوئی مسلمان کسی ایسے ملک میں رہتا ہو یا وہاں وزٹ پرگیا ہو جس کے ریسٹورنٹ کا ملازم غیر مسلم ہو اور وہ اپنے ہاتھ سے ذبح نہ کرتا ہو تو کیا وہ چکن کھانا جائز ہے؟

جواب: واضح رہے کہ اگر غیر مسلم کے ہاتھ میں کوئی ناپاک یا حرام چیز نہ لگی ہو اور کھانے میں کوئی حرام چیز بھی نہ ملاتا ہو تو مسلمان کے لیے اس کا پکایا ہوا کھانا حلال ہے، البتہ غیر مسلم (سوائے اہل کتاب) کا ذبیحہ قطعاً حرام ہے۔
سوال میں ذکر کردہ صورت میں اگر صارف کو حلال و حرام اور پاکی وناپاکی سے متعلق ریسٹورنٹ کے اصول و ضوابط پر مکمل اعتماد ہو، اور ریسٹورنٹ چکن وغیرہ کا گوشت کسی حلال مذبح خانے سے حاصل کرتا ہو تو اس صورت میں مسلمان کے لیے وہاں کھانا جائز ہے، بصورتِ دیگر اس سے احتراز کرنا چاہیے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

الھندیة: (347/5، ط: دار الفکر)
قال محمد - رحمه الله تعالى - ويكره الأكل والشرب في أواني المشركين قبل الغسل ومع هذا لو أكل أو شرب فيها قبل الغسل جاز ولا يكون آكلا ولا شاربا حراما وهذا إذا لم يعلم بنجاسة الأواني فأما إذا علم فأنه لا يجوز أن يشرب ويأكل منها قبل الغسل ولو شرب أو أكل كان شاربا وآكلا حراما۔۔۔۔۔۔ولم يذكر محمد - رحمه الله تعالى - الأكل مع المجوسي ومع غيره من أهل الشرك أنه هل يحل أم لا وحكي عن الحاكم الإمام عبد الرحمن الكاتب أنه إن ابتلي به المسلم مرة أو مرتين فلا بأس به وأما الدوام عليه فيكره كذا في المحيط.

و فیها ایضاً: (347/5، ط: دار الفکر)
ولا بأس بالذهاب إلى ضيافة أهل الذمة هكذا ذكر محمد - رحمه الله تعالى -

مختصر القدوری: (کتاب الذبائح، ص: 274)
والوثنی والمحرم وان ترک التسمیة عمدًا فالذبیحة میتة لاتؤکل وان ترکھا ناسیًا أکل ".

واللّٰه تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 599 Sep 05, 2023
ghair muslim chef /khana banane wale ka pakaya hua chicken khane / khanay ka hokom /hokum

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Halaal & Haram In Eatables

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.