عنوان: کسی خاص ڈبے(BoX) کو اس طرح فروخت کرنا کہ اس کے اندر جو کچھ ہے وہ آپ کا ہوگا، اس صورت کا شرعی حکم(11256-No)

سوال: مفتی صاحب! دراز (DARAZ) کی سیل لگ رہی ہے۔ اس میں ایک سیل یہ ہے کہ ایک Box ہے جو کہ 99 روپے کا ہوتا ہے۔ اب اس کے اندر کیا نکلے گا یہ نصیب کی بات ہے۔ ہو سکتا ہے کہ کوئی بڑی چیز نکل جائے یا کچھ بھی تو کیا یہ سوچ کر کہ کوئی بڑی چیز نکل جائے گی اس کو خریدنا جائز ہے؟

جواب: پوچھی گئی صورت میں خرید فروخت کا اصل معاملہ اس ڈبے (Box) پر ہوتا ہے، اس ڈبے کے اندر سے جو کچھ نکلے، اس کے بارے میں کوئی جھگڑا، نزاع یا claim نہیں ہوتا، اس لیے ایسے ڈبے (Box) کی خرید و فروخت شرعا درست ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

فقه البیوع: (372/1، ط: مکتبة معارف القرآن)

فلو باعه جمیع ما فی ھذه القریة أو ھذه الدار والمشتري لا یعلم ما فیها، لایصح لفحش الجهالة۔ أما لو باعه جمیع ما فی هذا البیت أو الصندوق أو الجوالق فانه یصح، لان الجھالة یسیرة.

واللہ تعالیٰ أعلم بالصواب
دار الافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 387 Oct 31, 2023
kisi khas box ko is tarah farokht karna k us k andar jo kuch hai wo aap ka hoga, is sorat ka sharai hukum

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Business & Financial

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.