عنوان: دل میں قسم کھانے کا حکم (1159-No)

سوال: مفتی صاحب! سوال یہ ہے کہ ایک مرتبہ میں نے کسی بات پر دل ہی دل میں قسم کھا لی تھی، کہ فلاں کام نہیں کروں گا، لیکن بعد میں وہ کام کر لیا تھا، کیا اس صورت میں مجھ پر کفارہ واجب ہوگا؟

جواب: واضح رہے کہ قسم منعقد ہونے کے لیے زبان سے قسم کے کلمات ادا کرنا ضروری ہے، دل ہی دل میں قسم کھانے سے قسم منعقد نہیں ہوتی ہے، اور نہ ہی اس کے توڑنے سے کفارہ واجب ہوتا ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

مشکوٰۃ المصابیح: (باب الوسوسة، الفصل الاول، ص: 18)
عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ رَضِيَ اللَّهُ عَنْهُ قَالَ: قَالَ رَسُولُ اللَّهِ - صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ -: " «إِنَّ اللَّهَ تَجَاوَزَ عَنْ أُمَّتِي مَا وَسْوَسَتْ بِهِ صُدُورُهَا، مَا لَمْ تَعْمَلْ بِهِ، أَوْ تَتَكَلَّمْ» " مُتَّفَقٌ عَلَيْهِ.

الدر المختار: (704/3، ط: دار الفکر)
وَرُكْنُهَا اللَّفْظُ الْمُسْتَعْمَلُ فِيهَا

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 1577 Mar 29, 2019
dil mai qasam khanay ka hukum, Ruling on swearing in the heart

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Ruling of Oath & Vows

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.