عنوان: مروان بن حکم سے متعلق ایک تاریخی روایت کی تحقیق(101214-No)

سوال: مروان اور ان کے والد حکم کے بارے میں بعض لوگ کہتے ہیں کہ ان کو حضور اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے مدینہ منورہ سے نکال دیا تھا، یہ بات کس حد تک صحیح ہے؟

جواب: جی ہاں ! یہ بات تاریخ کی کتابوں میں ملتی ہے کہ حکم بن العاص فتح مکہ کے دن مسلمان ہوا تھا، اس کے دل میں اسلام راسخ نہیں ہوا تھا اور یہ اندرونی طور پر مسلمانوں کا دشمن تھا، اس لیے آپ صلی الله عليه وسلم نے اس کو طائف کی طرف جلا وطن کر دیا تھا، چونکہ مروان اس وقت چھوٹا بچہ تھا، اس جلا وطنی کے نتیجہ میں وہ بھی اپنے والد کے ساتھ طائف چلا گیا تھا۔
( تاریخ اسلام : ٣٨٩ ، مؤلفہ : مولانا شاہ معین الدین ندوی)

نوٹ : اس تاریخی بات کا ہماری عملی زندگی کے مسائل سے تعلق نہیں ہے، لہذا ایسے سوالات پوچھے جائیں، جن کا واقعی ہماری عملی زندگی کے ساتھ ربط ہو۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

سیر اعلام النبلاء: (407/3، ط: دار الحدیث)
الحكم بن أبي العاص:
ابن أمية الأموي ابن عم أبي سفيان. يكنى أبا مروان. من مسلمة الفتح. وله أدنى نصيب من الصحبة. قيل: نفاه النبي -صلى الله عليه وسلم- إلى الطائف لكونه حكاه في مشيته وفي بعض حركاته فسبه وطرده. فنزل بوادي وج. ونقم جماعة على أمير المؤمنين عثمان كونه عطف على عمه الحكم وآواه وأقدمه المدينة ووصله بمئة ألف.

و فیھا ایضاً: (464/4، ط: دار الحدیث)
مروان بن الحكم :
ابن أبي العاص بن أمية بن عبد شمس بن عبد مناف، الملك، أبو عبد الملك القرشي، الأموي.
وقيل: يكنى أبا القاسم، وأبا الحكم.
مولده بمكة، وهو أصغر من ابن الزبير بأربعة أشهر, وقيل: له رؤية، وذلك محتمل۔۔۔وكان أبوه قد طرده النبي -صلى الله عليه وسلم- إلى الطائف، ثم أقدمه عثمان إلى المدينة؛ لأنه عمه.

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 1058
marwan bin hakam se/say mutaliq/mutalliq ek/aik tareekhi riwayat ki tahqeeq/tehqeeq, Research on a historical riwayah/narration about marwan bin hakam

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Miscellaneous

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2022.