عنوان: ایزی لوڈ (Easy Load) کا حکم (13327-No)

سوال: مسئلہ یہ پوچھنا ہے کہ آ یا یہ ایزی لوڈ کا کام کرنا صحیح ہے یا نہیں؟ کیونکہ اس میں پیسوں کے بدلے پیسے دیے جاتے ہیں تو کیا یہ سود نہیں ہوگا؟ برائے مہربانی رہنمائی فرمائیں جزاک اللہ

جواب: واضح رہے کہ ایزی لوڈ کے ذریعے پیسوں کے بدلے پیسے دینے کا معاملہ نہیں ہوتا، بلکہ پیسوں کے بدلے کال یا میسیج وغیرہ کرنے کی سہولت دی جاتی ہے، لہذا یہ اجارہ کا معاملہ ہے جو کہ شرعا جائز ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

الهداية: (230/3، ط: دار إحياء التراث العربي)‏

‏"الإجارة: عقد على المنافع بعوض" لأن الإجارة في اللغة بيع المنافع‎…‎‏"ولا ‏تصح حتى تكون المنافع معلومة، والأجرة معلومة"‏‎…..‎‏ "الأجرة لا تجب بالعقد ‏وتستحق بأحد معان ثلاثة: إما بشرط التعجيل، أو بالتعجيل من غير شرط، ‏أو باستيفاء المعقود عليه"

والله تعالىٰ أعلم بالصواب ‏
دارالافتاء الإخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 308 Nov 15, 2023
easy load ka hukum

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Employee & Employment

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.