عنوان: زکوٰۃ یا نفلی صدقات کی رقم سے کسی مستحق کو حج پر بھیجنا(13374-No)

سوال: ہماری رہنمائی فرمائیں کہ کیا کسی شخص کو زکوۃ یا نفلی صدقات کی رقم سے حج پر بھیجا جاسکتا ہے، جبکہ وہ شخص زکوۃ کا مستحق بھی ہے یعنی صاحب نصاب بھی نہیں ہے؟

جواب: واضح رہے کہ زکوٰۃ کی ادائیگی کے لیے مستحق زکوٰۃ کو مالک بنانا ضروری ہے، مالک بنانے کے بعد پھر وہ چاہے تو اپنی مرضی سے اس رقم کو اپنے حج ‏کے اخراجات میں خرچ کرے یا دیگر ضروریات میں خرچ کرے، محض حج ہی کے لیے اس رقم کو خرچ کرنا ضروری نہیں ہے۔
نفلی صدقات میں چونکہ تملیک (مالک بنانا) ضروری نہیں ہے، لہذا نفلی صدقات کی رقم سے کسی مستحق کو مالک بنائے بغیر بھی حج پر بھیجنا جائز ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

الفتاوى الهندية‎:‎‏ (189/1، ط: دار الفکر)‏
لا يجوز دفع الزكاة إلى من يملك نصابا أي مال كان دنانير أو دراهم أو سوائم ‏أو عروضا للتجارة أو لغير التجارة فاضلا عن حاجته في جميع السنة هكذا في ‏الزاهدي‎.‎

الدر المختار: (347/2، ط: دار الفکر)‏
‏(و) لا إلى (غني) يملك قدر نصاب فارغ عن حاجته الأصلية من أي مال كان ‏كمن له نصاب سائمة لا تساوي مائة درهم‎.‎

واللّٰه تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 324 Nov 29, 2023
zakat ya nafli sadqat ki raqam se kisi mustahiq ko hajj per bhejna

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Hajj (Pilgrimage) & Umrah

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.