عنوان: گم شدہ جانور میں صدقہ کی نیت کرنے کے بعد دوبارہ مل جانے کی صورت میں خود استعمال کرنا(14515-No)

سوال: ایک شخص کا جانور چوری ہوگیا، بہت تلاش کے بعد نہ ملنے پر اس نے صدقہ کی نیت کرلی، پھر وہ مل گیا، اب کیا مسئلہ ہے کہ اس جانور کو اپنے پاس رکھ سکتے ہیں یا صدقہ کی نیت کرنے کی وجہ سے اسے صدقہ ہی کرنا پڑے گا؟

جواب: پوچھی گئی صورت میں اگر مذکورہ شخص نے اس جانور میں صرف صدقہ کی نیت کی تھی، اور بطورِ نذر اپنی زبان سے اس کے بارے میں کچھ نہیں کہا تھا تو اس شخص کے لیے یہ جانور صدقہ کرنا ضروری نہیں ہے، بلکہ اس کی مرضی ہے اگر چاہے تو اس جانور کو خود استعمال کرے، اور اگر چاہے تو صدقہ کردے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

الدر المختار مع رد المحتار: (270/2، ط: دار الفكر)
ولا يخرج عن العهدة بالعزل بل بالأداء للفقراء۔۔۔
(قوله: ولا يخرج عن العهدة بالعزل) فلو ضاعت لا تسقط عنه الزكاة ولو مات كانت ميراثا عنه، بخلاف ما إذا ضاعت في يد الساعي لأن يده كيد الفقراء بحر عن المحيط

الموسوعة الفقهية الكويتية: (140/40، ط: دار السلاسل - الكويت)
اعتبر الفقهاء في صيغة النذر أن تكون باللفظ ممن يتأتى منهم التعبير به، وأن يكون هذا اللفظ مشعرا بالالتزام بالمنذور، وذلك لأن المعول عليه في النذر هو اللفظ، إذ هو السبب الشرعي الناقل لذلك المندوب المنذور إلى الوجوب بالنذر، فلا يكفي في ذلك النية وحدها بدونه.

واللّٰه تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 148 Jan 03, 2024
gum shuda janwar mein sadqa ke niyat karne ke bad dobara mil jane mein khod istemal karna

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Zakat-o-Sadqat

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.