عنوان: مشترکہ کاروبار کی زکوٰۃ کسی ایک شریک کی طرف سے ادا کرنا (15888-No)

سوال: ہم پانچ بندوں نے اسکول کھول کر اس میں کینٹین بھی کھولا ہے، احمد اس کا انچارج ہے، اب احمد اس کی زکوۃ ادا کر سکتا ہے یا ہر ایک خود زکوة ادا کرے؟

جواب: واضح رہے کہ زکوٰۃ ہر شخص پر انفرادی حیثیت میں واجب ہوتی ہے، اس لئے ہر شخص کو اپنے اپنے حصے کی زکوۃ ادا کرنی چاہیے، ایک شخص کا بقیہ شرکاء کی اجازت کے بغیر مشترکہ کھاتے سے زکوۃ ادا کرنا درست نہیں ہے، تاہم اگر تمام شرکاء اس بات پر اتفاق کرلیں کہ کاروبار کے اموال زکوٰۃ میں جس شریک کا جتنا حصہ ہے، اس کے تناسب سے ہر ایک کی طرف سے زکوٰۃ ادا کردی جائے گی تو ایسی صورت میں ہر شخص کی کاروبار میں موجود اموال زکوٰۃ کی زکوٰۃ ادا ہوجائے گی، کاروبار کے علاوہ باقی اثاثہ جات میں الگ سے زکوٰۃ ادا کی جائے گی۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

الجوھرة النیرة: (کتاب الزکوٰۃ، ص: 292)
لیس لکل واحد من الشریکین ان یؤدی زکوٰۃ مال الاخر الا باذنه

الفتاوي الهندية: (181/1، ط: دار الفكر)
الخليطان في المواشي كغير الخليطين فإن كان نصيب كل واحد منهما يبلغ نصابا وجبت الزكاة، وإلا فلا سواء كانت شركتهما عنانا أو مفاوضة أو شركة ملك بالإرث أو غيره من أسباب الملك وسواء كانت في مرعى واحد أو في مراع مختلفة فإن كان نصيب أحدهما يبلغ نصابا ونصيب الآخر لا يبلغ نصابا وجبت الزكاة على الذي يبلغ نصيبه نصابا دون الآخر، وإن كان أحدهما ممن تجب عليه الزكاة دون الآخر فإنها تجب على من تجب عليه إذا بلغ نصيبه نصابا.

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 76 May 03, 2024
mushtarka karobar ki zakat kisi aik shareek ki taraf se ada karna

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Zakat-o-Sadqat

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.