عنوان: عدت کب ختم ہوگی؟ (101673-No)

سوال: السلام علیکم، حضرت ! سوال یہ ہے کہ ایک صاحب کا انتقال 6 جمادی الثانی 1440ھ کو ہوا ہے، انکی اہلیہ کی عدت کونسی تاریخ کو ختم ہو گی؟

جواب: صورت مسئولہ میں ہر  مہینہ تیس تیس دن کا شمار کرکے چار مہینے دس دن یعنی ایک سو تیس دن پورے کرے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

کما فی القرآن الکریم:

وَ الَّذِیۡنَ یُتَوَفَّوۡنَ مِنۡکُمۡ وَ یَذَرُوۡنَ اَزۡوَاجًا یَّتَرَبَّصۡنَ بِاَنۡفُسِہِنَّ اَرۡبَعَۃَ اَشۡہُرٍ وَّ عَشۡرًا ۚ فَاِذَا بَلَغۡنَ اَجَلَہُنَّ فَلَا جُنَاحَ عَلَیۡکُمۡ فِیۡمَا فَعَلۡنَ فِیۡۤ اَنۡفُسِہِنَّ بِالۡمَعۡرُوۡفِ ؕ وَ اللّٰہُ بِمَا تَعۡمَلُوۡنَ خَبِیۡرٌ ﴿۲۳۴﴾

(سورۃ البقرۃ، آیت: 234)

وفی بدائع الصنائع:

وإن كانت الفرقة في بعض الشهراختلفوا فيه، قال أبو حنيفة يعتبر بالأيام فتعتد من الطلاق، وأخواته تسعين يوما، ومن الوفاة مائة، وثلاثين يوما(١٩٦/٣)

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی
Print Full Screen Views: 329

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Iddat(Period of Waiting)

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © AlIkhalsonline 2021.