عنوان: چائے یا پانی وغیرہ میں مکھی گرجانے کا حکم   (101951-No)

سوال: السلام علیکم، حضرات یہ بات پوچھنی تھی کہ اگر مکھی چائے میں گر جائے تو مکھی اندر ڈبو کے نکال کے چائے پینی چاہیے، جب کہ ایسا کرنے میں کراہت محسوس ہوتی ہے؟ اور کہا یہ جاتا ہے کہ یہ سنت طریقہ ہے، کیا واقعی یہ سنت ہے یا ایسے ہی پھیلای ہوئی بات ہے؟ رہنمائی فارمائیں جزاک اللہ

جواب: جی ! مذکورہ بات حدیث میں موجود ہے، البتہ آپ ﷺ نے مکھی کو چائے، سالن اور پانی وغیرہ کے اندر جو ڈبو کر نکالنے کا حکم دیا ہے، یہ آپﷺ نے بطورِ شفقت کے فرمایا ہے کہ اگر کسی کو پینا ہی ہو تو وہ پوری مکھی ڈبونے کے بعد پی لے، لھذا اگر کسی کی طبیعت کو کراہت ہوتی ہے اور وہ نہیں پینا چاہتا تو اس پر کوئی گناہ نہیں ہے اور نہ شریعت نے اس کو اس پینے پر مجبور کیا ہے۔
وفی أصول الشاشی:
وعلیٰ ھذا قلنا فی قولہ علیہ السلام اذا وقع الذباب فی طعام أحدکم فامقلوہ ثم انقلوہ فان فی احدی جناحیہ داء وفی الأخری دواء وإنہ لیقدم الداء علی الدواء دل سیاق الکلام علی أن المقل لدفع الأذی عنا، لاللأمر تعبدی حقا للشرع فلایکون للإیجاب۔
(ص28)

کذا فی البخاری:
عن أبي ہریرۃ رضي اللّٰہ عنہ یقول: قال النبي صلی اللّٰہ علیہ وسلم: إذا وقع الذباب في شراب أحدکم فلیغمسہ ثم لینزعہ، فإن في إحدیٰ جناحیہ دائً والأخریٰ شفائً۔
(صحیح البخاري، کتاب بدء الخلق / باب إذا وقع الذباب في شراب أحدکم الخ رقم: ۳۳۲۰ دار الفکر بیروت)

ترجمہ:
حضرت ابوہریرہ رضی اللہ عنہ راوی ہیں کہ نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: اگر مکھی پانی میں گر جائے تو اس کو اسی میں غوطہ دو، پھر اس کو نکال دو، کیونکہ اس کے ایک پر میں بیماری ہوتی ہے اور دوسرے میں شفاء ہوتی ہے۔

ماکولات و مشروبات میں مزید فتاوی

15 Sep 2019
اتوار 15 ستمبر - 15 محرّم 1441

Copyright © AlIkhalsonline 2019. All right reserved.

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com