عنوان: حاجی پر قربانی واجب ہے یا نہیں؟   (101955-No)

سوال: السلام علیکم و رحمۃاللہ و برکاتہ، کیا حج کرنے والے کیلئے 2 قربانیاں کرنی ضروری ہیں، ایک حج کی اور ایک عید کی؟ جزاک اللہ خیرا

جواب: جس شخص کا حج تمتع یا قران ہو، اس پر دو عبادتوں (حج اور عمرہ) جمع کرنے کی وجہ سے دم شکر (قربانی) واجب ہے، اور یہ قربانی حدود حرم میں ہوگی۔
اور اگر وہ صاحب نصاب ہے اور مکہ مکرمہ یا مدینہ طیبہ میں پندرہ دن کے قیام کی نیت کرلے تو اس پر عید کی بھی قربانی واجب ہے، اس کے بارے میں اختیار ہے، خواہ مکہ مکرمہ یا مدینہ منورہ میں کرے یا اپنے وطن میں کرائے۔
البتہ اگر پندرہ دن سے کم کی نیت ہو تو عید کی قربانی واجب نہیں ہوگی۔
کذا فی بدائع الصنائع:

وإن کان قارنا أو متمتعا یجب علیہ أن یذبح ویحلق ویقدم الذبح علی الحلق، وروي عن النبي صلی اﷲ علیہ وسلم أنہ قال: أول نسکنا في یومنا ہذا: الرمي، ثم الذبح، ثم الحلق۔
(بدائع الصنائع، ۲/ ۱۵۸)

و ایضاً :

ولا تجب الأضحیۃ علی الحاج، وأراد بالحاج المسافر، فأما أہل مکۃ فتجب علیہم الأضحیۃ وإن حجوا۔
(بدائع الصنائع، کتاب الأضحیۃ، فصل في شرائط وجوب الأضحیۃ،۵/ ۶۳)

حج میں مزید فتاوی

24 Aug 2019
ہفتہ 24 اگست - 22 ذو الحجة 1440

Copyright © AlIkhalsonline 2019. All right reserved.

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com