عنوان: مقدس اوراق کو کچرے میں ڈالنے کاحکم(1970-No)

سوال: حضرت ! قرآنی اوراق کے علاوہ جو دنیاوی کام کے لئے لکھی گئی تحاریر میں اللہ اور محمد یا دیگر نام لکھے ہوتے ہیں، انکے بارے میں کیا حکم ہے؟

جواب: ایسے کاغذات کو تلف کرنے کی بہتر صورت یہ ہے کہ دریا میں یا کسی غیرآباد کنویں میں ڈال دیا جائے، یا زمین میں دفن کردیا جائے، اور بصورت مجبوری ان کو جلاکر راکھ پانی میں ملاکر کسی پاک جگہ پر، جہاں پاؤں نہ پڑتے ہوں، ڈال دیا جائے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

الھندیة: (323/5، ط: دار الفکر)

المصحف إذا صار خلقا لا يقرأ منه ويخاف أن يضيع يجعل في خرقة طاهرة ويدفن، ودفنه أولى من وضعه موضعا يخاف أن يقع عليه النجاسة أو نحو ذلك ويلحد له؛ لأنه لو شق ودفن يحتاج إلى إهالة التراب عليه، وفي ذلك نوع تحقير إلا إذا جعل فوقه سقف بحيث لا يصل التراب إليه فهو حسن أيضا، كذا في الغرائب. المصحف إذا صار خلقا وتعذرت القراءة منه لا يحرق بالنار، أشار الشيباني إلى هذا في السير الكبير وبه نأخذ، كذا في الذخيرة.

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 488 Aug 10, 2019
muqaddas aouraq ko kachray mai dalne ka hukum, Ruling / Order to throw holy papers in the trash

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Prohibited & Lawful Things

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.