عنوان: عدت کے دوران کمپنی کا کام گھر میں کرنا(102184-No)

سوال: مفتی صاحب ! ایک خاتون جنہوں نے اپنے شوہر سے طلاق لے لی ہے اور عدت میں ہیں، وہ خاتون ملازمت کرتی ہیں، جس میں انٹرنیشنل ای میل کمیونیکیشن شامل ہے، ہر ای میل کا مواد فکسڈ / آفِیشَل ہے، کوئی پرسنل کمیونیکیشن نہیں ہے، کیا یہ عورت گھر بیٹھ کر یہ کمیونیکشن کرے، تو کیا یہ دورانِ عدت کرنے کی اجازت ہوگی؟ جزاک اللہ

جواب: جی ہاں! عدت کے دوران عورت مذکورہ کام کرسکتی ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

لما فی الشامیہ:

( وتعتدان ) أي معتدة طلاق وموت ( في بيت وجبت فيه ) ولا يخرجان منه ( إلا أن تُخرج أو ينهدم المنزل أو تخاف ) انهدامه أو ( تلف مالها أو لا تجد كراء البيت ) ونحو ذلك من الضرورات فتخرج لأقرب موضع إليه''۔

(ج: 3، ص: 536، ط: دار المعرفہ)

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی
Print Full Screen Views: 391

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Iddat(Period of Waiting)

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © AlIkhalsonline 2021.