عنوان: ممنوع اوقات میں اگرآیت سجدہ تلاوت کی جائے تو سجدہ تلاوت کرنے کا کیا حکم ہے؟     (102226-No)  

سوال: السلام علیکم، اگر ایک شخص ممنوعہ اوقات میں قرآن کی تلاوت کر رہا ہے اور سجدہ آ جاتا ہے تو کیا سجدہ اسی وقت کیا جاسکتا ہے یا موخر کرکے کرنا ہو گا؟

جواب: واضح رہے کہ ممنوع اوقات تین ہیں: طلوع آفتاب ، غروب آفتاب اور عین زوال کا وقت ، ان تین اوقات میں کسی قسم کی کوئی نماز خواہ فرض ہو یا واجب، سنت ہو یا نفل، نمازجنازہ ہو یا سجدہ تلاوت، کچھ جائز نہیں ہے ، لیکن اگر ان اوقات میں آیتِ سجدہ کی تلاوت کی جائے تو سجدہ تلاوت کرنا جائز ہے، البتہ افضل یہ ہے کہ سجدہ تلاوت کو مؤخر کرکے بعد میں ادا کیاجائے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

لمافی الھندیة:
''( الفصل الثالث في بيان الأوقات التي لا تجوز فيها الصلاة وتكره فيها ) ثلاث ساعات لا تجوز فيها المكتوبة ولا صلاة الجنازة ولا سجدة التلاوة: إذا طلعت الشمس حتى ترتفع وعند الانتصاف إلى أن تزول وعند احمرارها إلى أن يغيب إلا عصر يومه ذلك فإنه يجوز أداؤه عند الغروب۔۔۔۔۔ﺇﺫا ﻭﺟﺒﺖ ﺻﻼﺓ اﻟﺠﻨﺎﺯﺓ ﻭﺳﺠﺪﺓ اﻟﺘﻼﻭﺓ ﻓﻲ ﻭﻗﺖ ﻣﺒﺎﺡ ﻭﺃﺧﺮﺗﺎ ﺇﻟﻰ ﻫﺬا اﻟﻮﻗﺖ ﻓﺈﻧﻪ ﻻ ﻳﺠﻮﺯ ﻗﻄﻌﺎ ﺃﻣﺎ ﻟﻮ ﻭﺟﺒﺘﺎ ﻓﻲ ﻫﺬا اﻟﻮﻗﺖ ﻭﺃﺩﻳﺘﺎ ﻓﻴﻪ ﺟﺎﺯ؛ ﻷﻧﻬﺎ ﺃﺩﻳﺖ ﻧﺎﻗﺼﺔ ﻛﻤﺎ ﻭﺟﺒﺖ. ﻛﺬا ﻓﻲ اﻟﺴﺮاﺝ اﻟﻮﻫﺎﺝ ﻭﻫﻜﺬا ﻓﻲ اﻟﻜﺎﻓﻲ ﻭاﻟﺘﺒﻴﻴﻦ ﻟﻜﻦ اﻷﻓﻀﻞ ﻓﻲ ﺳﺠﺪﺓ اﻟﺘﻼﻭﺓ ﺗﺄﺧﻴﺮﻫﺎ ﻭﻓﻲ ﺻﻼﺓ اﻟﺠﻨﺎﺯﺓ اﻟﺘﺄﺧﻴﺮ ﻣﻜﺮﻭﻩ. ﻫﻜﺬا ﻓﻲ اﻟﺘﺒﻴﻴﻦ ﻭﻻ ﻳﺠﻮﺯ ﻓﻴﻬﺎ ﻗﻀﺎء اﻟﻔﺮاﺋﺾ ﻭاﻟﻮاﺟﺒﺎﺕ اﻟﻔﺎﺋﺘﺔ ﻋﻦ ﺃﻭﻗﺎﺗﻬﺎ ﻛﺎﻟﻮﺗﺮ.(ج:1، ص:52، ط: دارالفکر، بیروت۔)

واللہ تعالی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی

(مزید سوالات و جوابات کیلئے ملاحظہ فرمائیں)
http://AlikhlasOnline.com

نماز میں مزید فتاوی

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Salath (Prayer)

16 Oct 2019
بدھ 16 اکتوبر - 16 صفر 1441

Copyright © AlIkhalsonline 2019. All right reserved.

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com