عنوان: نادِ علی پڑھنے کا حکم(102703-No)

سوال: مفتی صاحب ! سنا ہے کہ بچہ نافرمان ہو تو نادِ علی پڑھنے سے فرمانبردار ہوجاتا ہے، تو کیا نادِ علی پڑھ سکتے ہیں؟

جواب: "نادِ علی" چونکہ شرکیہ کلام ہے، لھذا اس کو پڑھنا جائز نہیں ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

کذا فی الموسوعۃ الفقہیۃ:
یجوز في الأذکار المطلقۃ لإتیان لما ہوصحیح في نفسہ مما یتضمن الثناء علی اللّٰہ تعالیٰ، ولایستلزم نقصا بوجہ الوجوہ، وإن لم تکن تلک الصیغۃ ماثورۃ عن النبي صلی اللّٰہ علیہ وسلم۔

وقد یکون الذکر حراماً وذلک کان یتضمن شرکاً کتلبیتہ أہل الجاہلیۃ، أو یتضمن نقصا مثل ماکانوا یقولونہ في أول الإسلام: السلام علی اللّٰہ من عبادہ، فقال النبي صلی اللّٰہ علیہ وسلم: لا تقولوا: السلام علی اللّٰہ فإن اللّٰہ ہو السلام، ولکن قولوا التحیات للّٰہ والصلات والطیبات۔
(ج2، ص22-238)

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی

(مزید سوالات و جوابات کیلئے ملاحظہ فرمائیں)
http://AlikhlasOnline.com

بدعات و رسومات میں مزید فتاوی

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Bida'At & Customs

06 Dec 2019
جمعہ 06 دسمبر - 8 ربيع الثانی 1441

Copyright © AlIkhalsonline 2019. All right reserved.

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com