عنوان: کاغذ وغیرہ پر اگر مقدس نام لکھے ہوں تو ان کے احترام کا حکم (2862-No)

سوال: اگر اردو یا انگریزی میں کسی عام آدمی کا نام محمد لکھا ہو،مثلاً اخبار یا دفتری کاغذات وغیرہ میں، تو کیا ایسے کاغذات کا احترام بھی ضروری ہوگا ؟

جواب: واضح رہے کہ اگر کاغذات یا اخبارات وغیرہ پر کسی بھی زبان میں کسی مقدس ہستی کا نام، یا قرآن کے الفاظ یا اللہ تعالٰی کے ناموں میں سے کوئی نام لکھا ہوا ہو، تو اس کاغذ کے ٹکڑے کا احترام کرنا ضروری ہے، اوراگر ایسے کاغذ کو ردی میں ڈالنا ہو، تو اس مقدس نام کو کاٹ کر الگ کرلیں، یا وہ نام وہاں سے بالکل مٹادیں، اس کے بعد اس کاغذ وغیرہ کو ضائع کردیں تو اس کی گنجائش ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

الھندیۃ: (الباب الخامس في آداب المسجد، 323/5، ط: رشيدية)
’’ولو كتب القرآن على الحيطان و الجدران، بعضهم قالوا: يرجى أن يجوز، و بعضهم كرهوا ذلك مخافة السقوط تحت أقدام الناس، كذا في فتاوي قاضيخان‘‘.

و فیھا ایضاً: (الباب الخامس في آداب المسجد، 323/5، ط: رشيدية)
’’إذا كتب اسمَ ’’فرعون‘‘ أو كتب ’’أبو جهل‘‘ على غرض، يكره أن يرموه إليه؛ لأن لتلك الحروف حرمةً، كذا في السراجية‘‘.

واللہ تعالیٰ اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 524 Dec 12, 2019
kaghaz / paper waghaira per agar muqadas naam likhe / likhey ho to un ke ehtram ka hokom / hokum, Ruling on respecting holy names if they are written on paper etc.

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Prohibited & Lawful Things

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.