عنوان: کاروباری نفع میں اللہ تعالی کے راستہ میں دینے کی نذر ماننا(3048-No)

سوال: السلام علیکم، مفتی صاحب ! میرے کزن نے کاروبار کرتے ہوئے زبان سے یہ نیت کی کہ میں ہر مہینے نفع میں سے پانچ فیصد اللہ کے راستے میں دونگا، تو کیا وہ پانچ فیصد مسجد میں یا کسی ایسے ساتھی کو جو جماعت میں جارہا ہو یا کسی کی دعوت کرکے کھلا سکتا ہے اور اس دعوت میں سے خود بھی انہی پیسوں میں سے کھا سکتا ہے ؟

جواب: صورت مسئولہ میں آپ نے زبان سے کاروبار میں جو نفع کا حصہ اللہ تعالی کے لیے خاص کیا ہے، اس کی حیثیت نذر کی ہے، اس سے مسجد بنوانا، خود استعمال کرنا، یا کسی امیر کو دینا درست نہیں ہے، بلکہ کسی غریب مستحق کو دینا ضروری ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

الفقہ الاسلامی و ادلته: (2567/4، ط: رشیدیة)
واما اذا كان المنذور معلقا بشرط ان شفی الله مریضی او ان قدم فلانا لغائب فلله على صوم شهر او صلاۃ رکعتین او التصدق بليرۃ ونحوه فان وجد الشرط فعليه الوفاء بالنذر

البحر الرائق: (263/2)
'وقيد بالزكاة ؛ لأن النفل يجوز للغني كما للهاشمي، وأما بقية الصدقات المفروضة والواجبة كالعشر والكفارات والنذور وصدقة الفطر فلا يجوز صرفها للغني ؛ لعموم قوله عليه الصلاة والسلام : «لا تحل صدقة لغني»، خرج النفل منها ؛ لأن الصدقة على الغني هبة، كذا في البدائع

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 429
Karobari Nafay mein Allah Taala kay rastay mein dainay ki nazar manna, dene, main, rasteh, Nafey, Nafah, Nazr, Nadhr, Karobar, Tijarat mein sadqah, Vowing in the way of Allah Almighty out of business profit, Giving in way of Allah from Business profit, Vow

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Ruling of Oath & Vows

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2022.