عنوان: ایام حج میں معلم کا دوسروں کو تلبیہ کہلوانا(3791-No)

سوال: السلام علیکم، مفتی صاحب! حاجی جب حج کے لیے جاتے ہیں، تو وہاں یہ دیکھنے میں آیا ہے کہ معلم بس میں موجودہ حجاج کو تلبیہ پڑھانے کے لئے زور سے تلبیہ پڑھتا ہے، جس پر باقی سب اس کی تکرار کرتے ہیں، کیا اس طرح تلبیہ پڑھانا جائز ہے؟

جواب: واضح رہے کہ اگر حجاج کی آسانی کے لئے ایسا کیا جائے، تاکہ ان کو تلبیہ یاد ہو جائے اور پڑھنے میں آسانی ہو، تو اس میں کوئی مضائقہ نہیں ہے، ورنہ آواز میں آواز ملا کر تلبیہ کہنا مناسب نہیں ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

غنیۃ الناسک: (باب الاحرام، ص: 75)
واذا لبی یستحب ان یخفض صوتہ۔۔۔۔۔۔۔واذا کانوا جماعۃ لا یمشی احد علی تلبیۃ الاخر، بل کل انسان یلبی بنفسہ۔۔۔۔۔۔۔ولکن لا یرفع صوتہ بھا بحیث یشوش علی مصل او طائف او نائم او ذاکر او نحو ذلک۔

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 860 Mar 18, 2020
Ayyam e Hajj, Ayyam-e-Hajj, mein, muallim, ka, doosroon, dusroon, ko, talbiah, kehlwana, kehalwana, talbiyah, In days of Hajj Muallim making others to read talbiah in congregation, talbiyah

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Hajj (Pilgrimage) & Umrah

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.