عنوان: زکوۃ کی رقم سے راشن دلانا(103870-No)

سوال: السلام علیکم، مفتی صاحب ! کیا موجودہ حالات میں زکوة کے پیسوں سے غرباء کو راشن اور دیگر ضروریات زندگی خرید کر دی جا سکتی ہیں یا نقد رقم ان کی ملکیت میں دینا ضروری ہے؟

جواب: مستحقِ زکاۃ کو نقد رقم کے علاوہ کوئی چیز مالک بنا کر دینے سے بھی زکاۃ ادا ہوجاتی ہے، لہذا مستحقِ زکوۃ شخص کو رقم کے بجائے راشن وغیرہ دینے سے بھی زکوۃ ادا ہو جائے گی۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:
کما فی البدائع:
واما الذي يرجع الى المودی فمنها ان يكون مالا متقوما على الاطلاق سواء كان منصوصا عليه او لا من جنس المال الذي وجبت فيه الزكاۃ او من غير جنسه والاصل لان كل مال يجوز التصدق به تطوعا يجوز اداء الزكاۃ منہ وما لا فلا
(ج:2/41، سعید)


وکذا فی الھندیۃ:
المال الذی تجب فیہ الزکاۃ ان ادی زکاتہ من خلاف جنسہ ادی قدر قیمۃ الواجب اجماعاً
(ج:1/180)



واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی

(مزید سوالات و جوابات کیلئے ملاحظہ فرمائیں)
http://AlikhlasOnline.com

زکوة و صدقات میں مزید فتاوی

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Zakat-o-Sadqat

02 Apr 2020
جمعرات 02 اپریل - 8 شعبان 1441

Copyright © AlIkhalsonline 2020. All right reserved.

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com