عنوان: بغیر اجرت کے تراویح پڑھانے والا حافظ نہ ملے تو کیا کریں؟ (104207-No)

سوال: السلام علیکم، مفتی صاحب! میرا سوال یہ ہے کہ اگر کسی جگہ پر بغیر اجرت کے کوئی تراویح پڑھانے والا حافظ نہ ملے، تو ایسی صورت میں شرعاً کیا حکم ہے؟

جواب: اگر بغیر اجرت کے تراویح کی نماز پڑھانے والا کوئی حافظ نہ ملے، تو کسی حافظ کو صرف رمضان المبارک کے لیے نائب امام مقرر کر لیا جائے، اور عشاء وغیرہ ایک دو نمازیں اس کے ذمہ لازم کردی جائیں، اسی ضمن میں وہ تراویح بھی پڑھائے تو اجرت دینے کی گنجائش ہوگی۔

دلائل:

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


کذا فی الشامیۃ:

وإن القراء ۃ لشيء من الدنیا لا یجوز، وأن الآخذ والمعطي آثمان؛ لأن ذلک یشبہ الاستئجار علی القراء ۃ، ونفس الاستئجار علیہا لا یجوز۔

(شامي، باب قضاء الفوائت، مطلب في بطلان الوصیۃ بالتہالیل، کراچی ۲/ ۷۳، زکریا ۲/ ۵۳۴)

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی
Print Full Screen Views: 327
bagair ujrat ky taraweeh parhaanay / parhanay wala hafiz na milay to / tw kia karain ?

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Taraweeh Prayers

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2022.