عنوان: بیماری کا صدقہ مسجد و مدرسہ میں دینے کا حکم(5066-No)

سوال: مفتی صاحب! سنا ہے کہ بیماری کا علاج صدقے سے کرنے کی ترغیب آئی ہے، کیا اس نوعیت کا صدقہ مسجد یا مدرسہ کی تعمیر یا مدرسہ میں قران پاک دینے سے ادا ہو جاتا ہے؟

جواب: بیماری میں جو صدقہ نکالا جاتا ہے، اس کا شمار "صدقات نافلہ" میں ہوتا ہے، اس کو غرباء، فقراء اور مستحقین زکوۃ کو بھی دیا جاسکتا ہے، اور مسجد ومدرسہ کی ضروریات میں بھی خرچ کیا جاسکتا ہے، غرض کسی بھی کارِ خیر میں اس کو صرف کرنے کی گنجائش ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

شعب الإيمان للبيهقي: (277/11)
''تصدقوا وداووا مرضاكم بالصدقة؛ فإن الصدقة تدفع عن الأعراض والأمراض، وهي زيادة في أعمالكم وحسناتكم''.

صحیح مسلم: (رقم الحدیث: 4223)
حَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ أَيُّوبَ، وَقُتَيْبَةُ يَعْنِي ابْنَ سَعِيدٍ، وَابْنُ حُجْرٍ، قَالُوا: حَدَّثَنَا إِسْمَاعِيلُ هُوَ ابْنُ جَعْفَرٍ، عَنِ الْعَلَاءِ، عَنْ أَبِيهِ، عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ، أَنَّ رَسُولَ اللهِ صَلَّى اللهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ، قَالَ:إِذَا مَاتَ الْإِنْسَانُ انْقَطَعَ عَنْهُ عَمَلُهُ إِلَّا مِنْ ثَلَاثَةٍ: إِلَّا مِنْ صَدَقَةٍ جَارِيَةٍ، أَوْ عِلْمٍ يُنْتَفَعُ بِهِ، أَوْ وَلَدٍ صَالِحٍ يَدْعُو لَهُ

الھندیة: (251/1، ط: دار الفکر)
ولا یجوز ان یبنی بالزکاۃ المسجد، وکذا القناطر والسقایات، واصلاح الطرقات، وکری الانھار، والحج، والجھاد، وکل مالا تملیک فیہ.... ھذا فی الواجبات کالزکاۃ، والنذر، والعشر، والکفارۃ، فأما التطوع فیجوز الصرف إلیہم۔

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 1014 Aug 24, 2020
beemari ka sadqa masjod o madersa me / mein dene ka hukum / hukm, The order to give charity for / of sickness in mosques and madrassas

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Zakat-o-Sadqat

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.