عنوان: نیند کے دوران کفریہ کلمہ کہنے کا حکم (105113-No)

سوال: کیا فرماتے ہیں مفتیان کرام اس مسئلہ کے متعلق کے اگر کوئی شخص سو رہا ہو، اور سوتے میں اس کے منہ سے کوئی کلمہ کفریہ ادا ہوجائے، تو کیا اس صورت میں وہ شخص کافر ہوجائے گا یا نہیں؟

جواب: واضح رہے کہ نیند کی حالت میں انسان مکلف نہیں ہوتا، لہذا نیند میں اگر کوئی شخص کفریہ کلمہ اپنے منہ سے نکالے، تو اس کا اعتبار نہیں ہوگا۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

کما فی الحدیث النبوی:

عن عائشۃ ان رسول اﷲ ﷺ قال رفع القلم عن ثلاثۃ عن النائم حتی یستقیظ و عن الصغیر حتی یکبر وعن المجنون حتی یعقل او یفیق۔

(ابن ماجہ، ص:147)

وفیہ ایضاً:

قال علیہ الصلوٰۃ والسلام رفع القلم عن ثلثۃ عن النائم حتی یستقیظ وعن الصبی حتی یبلغ وعن المعتوہ حتی یعقل۔
رواہ الترمذی وابو داؤد۔

(مشکٰوۃ، ص:284)

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی
Print Full Screen Views: 316
neend / soney ke / key doran kufria kalma kehne / kehney ka hokom / hokum

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Beliefs

Copyright © AlIkhalsonline 2021. All right reserved.

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com