عنوان: ارواح کے ہجوم سے متعلق روایت کی تخریج (105164-No)

سوال: مفتی صاحب ! کیا مندرجہ ذیل حدیث صحیح ہے؟ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: روحوں کے ہجوم کے ہجوم الگ الگ تھے، پھر وہاں جن روحوں میں آپس میں پہچان ہوئی تھی، ان میں یہاں بھی محبت ہوتی ہے اور جو وہاں غیر تھیں، یہاں بھی وہ خلاف رہتی ہیں۔

جواب: جی ہاں! یہ روایت بخاری شریف "كِتَاب أَحَادِيثِ الْأَنْبِيَاءِ، بَابُ الأَرْوَاحُ جُنُودٌ مُجَنَّدَةٌ" میں ہے۔

عن عائشة رضي الله عنها، قالت: سمعت النبي صلى الله عليه وسلم، يقول:" الارواح جنود مجندة فما تعارف منها ائتلف وما تناكر منها اختلف"

(بخاری حدیث نمبر:٣٣٣٦)

ترجمہ:
حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا سے روایت ہے کہ  میں نے جناب نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم سے سنا، آپ صلی اللہ علیہ وسلم فرما رہے تھے:
"روحوں کے ہجوم کے ہجوم الگ الگ تھے، پھر وہاں جن روحوں میں آپس میں پہچان ہوئی تھی، ان میں یہاں بھی محبت ہوتی ہے اور جو وہاں غیر تھیں، یہاں بھی وہ خلاف رہتی ہیں"۔

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی

(مزید سوالات و جوابات کیلئے ملاحظہ فرمائیں)
http://AlikhlasOnline.com

قرآن و حدیث کی تفسیر تحقیقی میں مزید فتاوی

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Quran-o-Ahadees

20 Sep 2020
01 Safar 1442

Copyright © AlIkhalsonline 2020. All right reserved.

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com