عنوان: صدقہ کی نیت سے دریا میں پیسے بہانا (5236-No)

سوال: بعض لوگ صدقے کی نیت سے دریا یا سمندر میں پیسے وغیرہ ڈالتے ہیں کہ یہ ہماری جان ومال کی طرف سے صدقہ ہے، کیا یہ طریقہ درست ہے؟

جواب: واضح رہے کہ دریا میں پیسے بہانا مال کو ضائع کرنا ہے، اور یہ عمل بجائے ثواب کے گناہ کا باعث ہے، لہذا اس سے اجتناب کرنا چاہیے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

مشکوٰۃ المصابیح: (باب التؤکل و الصبر، ص: 453، رقم الحاشیة: 2، ط: قدیمی)

عن ابی ذر عن النبی صلی اللہ علیہ وسلم قال: الزھادۃ فی الدنیا لیست بتحریم الحلال ولا اضاعۃ المال۔۔۔۔۔الخ
وفي حاشيه المشکوٰۃ عن المرقاۃ: ولا اضاعۃ المال اي بتضیيعه وصرفه في غير محلہ بأن یرميه في بحر او يعطيه للناس من غير تمییز بين غنی وفقير ۔

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 783 Sep 24, 2020
sadqay ki niyyat say darya mai paise bahana, Pouring money into the river with the intention of charity

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Zakat-o-Sadqat

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.