عنوان: کیا سود کی رقم غریب رشتہ دار کو دے سکتے ہیں؟ (105266-No)

سوال: مجھے بینک نے کچھ رقم سود کے طور پر دی ہے، جو میرے پاس رکھی ہوئی ہے، میں نے اس کو استعمال نہیں کیا، آپ حضرات سے پوچھنا یہ ہے کہ میں وہ رقم کو اپنے کسی غریب رشتہ دار کو دے سکتا ہوں؟

جواب: جی ہاں! آپ سود کی رقم اپنے غریب مستحق رشتہ داروں کو دے سکتے ہیں؛ البتہ سود کی رقم کسی غریب کو دیتے وقت ثواب کی نیت نہ ہو، بلکہ صرف حرام مال کے وبال سے بچنے کی نیت ہو۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

رد المحتار: (کتاب الحظر والاباحة، فصل فی البیع، 385/6، ط: سعید)
ویردونہا علی أربابہا إن عرفوہم، وإلا تصدقوا بہا؛ لأن سبیل الکسب الخبیث التصدق إذا تعذر الرد علی صاحبہ۔

قواعد الفقه: (ص: 115)
ویتصدق بلا نیۃ الثواب وینوی بہ براءۃ الذمۃ۔

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 273
kia sood ki raqam ghareeb rishtaydar ko day saktay hain?

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Loan, Interest, Gambling & Insurance

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2022.