عنوان: پرائز بانڈ پر ملنے والی انعامی رقم سے والدین کو عمرہ کروانا (105267-No)

سوال: السلام علیکم، مفتی صاحب! میرا پرائز بانڈ میں انعام نکل آیا ہے، کیا میں اس رقم سے اپنے والدین کو عمرے پر بھیج سکتی ہوں؟

جواب: پرائز بانڈ پر ملنے والا انعام ناجائز اور حرام ہے، کیونکہ اس میں "سود" اور "جوا" پایا جاتا ہے، لہذا اس رقم سے والدین کو عمرہ کروانا بھی جائز نہیں ہے، بلکہ وہ رقم بغیر نیت ثواب کے کسی محتاج فقیر کو دے دینی چاہیے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

ارشاد السارى: (ص: 3، ط: بیروت)
وتكون النفقه من وجہ حلال فان الحج لا يقبل بالنفقۃ الحرام ۔۔۔۔۔فلا يثاب لعدم القبول۔

الدر المختار: (کتاب الحظر والاباحة، فصل فی البیع، 385/6، ط: سعید)
لأن سبیل الکسب الخبیث التصدق إذا تعذر الرد علی صاحبہ۔

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 356
prize bond par milnay waali inaami raqam say waldain ko umra karwana

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Loan, Interest, Gambling & Insurance

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2022.