عنوان: کیا حرام کو حلال سمجھنے سے آدمی کافر ہو جاتا ہے؟ (105395-No)

سوال: السلام علیکم، مفتی صاحب! کیا اگر کوئی شخص اسلام میں حرام کی گئی چیز کو حلال سمجھے، اور دوسروں کے سامنے اس کی اچھائیاں اور اس کے فوائد بیان کرے، تو کیا وہ شخص اس حرام کو حلال سمجھنے کی وجہ سے کافر ہوجائے گا یا نہیں؟

جواب: واضح رہے کہ کسی قطعی حرام چیز کو حلال اور قطعی حلال چیز کو حرام سمجھنے سے آدمی کافر ہو جاتا ہے، کیونکہ یہ واضح طور پر اللہ تعالی کے حکم قطعی کو نہ ماننے والا ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

کذا فی البحر الرائق:

والأصل أن من اعتقد الحرام حلالاً فإن کان حراماً لغیرہ کمال الغیر لا یکفر، وإن کان لعینہ فإن کان دلیلہ قطعیاً کفر وإلا فلا۔

(البحر الرائق ج:5 ص:206)

کذا فی الشامیۃ:

والا صل ان من اعتقد الحرام حلالا فان کان حراما لغیرہ کمال الغیر لا یکفر وان کان لعینہ فان کان دلیلہ قطعیا کفر والا فلا وقیل التفصیل فی العالم اما الجاہل فلا یفرق بین الحرام لعینہ ولغیرہ وانما الفرق فی حقہ ان ما کان قطعیا کفر بہ والا فلا فیکفر اذا قال الخمر لیس بحرام۔

(رد المحتار، باب المرتد ج:3 ص:393، ط۔سعید، مطلب فی منکر الاجماع)

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی
Print Full Screen Views: 530
kia haraam ko halal samajhnay say aadmi kaafir hojata hai?

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Beliefs

Copyright © AlIkhalsonline 2021. All right reserved.

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com