عنوان: جنابت کی حالت میں کام کرنے سے حاصل ہونے والی آمدنی کا حکم (105801-No)

سوال: ایک دن میں نے حالت جنابت میں کام کیا، اس وجہ سے کیا پورے مہینے کی تنخواہ حرام ہوگی یا صرف اس دن کی ایک دیہاڑی حرام ہوگی؟

جواب: حالت جنابت میں حدود مسجد میں داخل ہونا ، طواف کرنا ، نماز پڑھنا ، قرآن کی تلاوت کرنا اور قرآن پاک کو چھونا منع ہے ، اس کے علاوہ تمام امور انجام دینا جائز ہے ، لہذا حالت جنابت میں کام کرنے سے حاصل ہونے والی آمدنی حلال ہے ۔

غسل فرض ہونے کے بعد پہلی فرصت میں غسل کرلینا چاہئے ، یا پھر کم از کم نجاست دھو کر وضو کرلیا جائے ، غسل میں اتنی تاخیر کرنا کہ نماز کا وقت نکل جائے ، ناجائز ہے۔

دلائل:

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


قال فی در المختار

و یحرم بالاکبر دخول مسجد و تلاوہ القرآن بقصدہ و مسہ و طواف۔

(ص:170 ، ج:1 ، ط: ایچ ایم سعید)

قال فی رد المحتار

قولہ: ( و لا باس ) یشیر الی ان الوضوء الجنب لھذہ الاشیاء مستحب کوضوء المحدث وقد تقدم ۔

( ص : 293 ، ج :1 ، ط : ایچ ایم۔سعید )

قال فی در المختار

ولا باس لحائض و جنب بقراءہ ادعیہ و مسہا و حملھا وذکر اللہ تعالیٰ و تسبیح و اللہ و شرب بعد مضمہ و غسل ید ۔

( ص : 293 ، ج :1 ، ط : ایچ ایم۔سعید )

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی
Print Full Screen Views: 411
janabat ki halat / haalat me / mein kam / kaam karne / karney se / sey hasil hone / honey wali aamadni / income ka hokom / hokum

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Purity & Impurity

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2022.