عنوان: ایزی پیسہ اکاؤنٹ سے بجلی کے بل کی ادائیگی پر کمپنی کی طرف سے ملنے والی رقم استعمال کرنے کا حکم(106106-No)

سوال: السلام علیکم، مفتی صاحب! ایزی پیسہ کے اکاؤنٹ سے ہم بجلی کا بل جمع کرواتے ہیں، آن لائن بل جمع کرنے پر 6 یا 7 روپے ہمیں ایک ہفتے تک روزانہ دیتے ہیں، کیا وہ پیسے ہمارے لیے جائز ہیں؟

جواب: ایزی پیسہ اکاؤنٹ میں جمع کردہ رقم کی حیثیت قرض کی ہے، اور قرض دے کر اس سے کسی بھی قسم کا نفع اٹھانا جائز نہیں ہے.
مذکورہ صورت میں بجلی کا بل ادا کرنے کی صورت میں روزانہ جو پیسے ملتے ہیں٬ وہ اسی اکاؤنٹ کی وجہ سے ملتے ہیں٬ لہذا اس رقم کا استعمال جائز نہیں ہے۔

دلائل:

______


لما فی الشامیۃ:

"وفي الأشباه: كل قرض جر نفعاًحرام، فكره للمرتهن سكنى المرهونة بإذن الراهن"

(مطلب کل قرض جر نفعا، ج:5/166، ط: سعید)

وفیہ ایضا:

"وفي الخانية: رجل استقرض دراهم وأسكن المقرض في داره، قالوا: يجب أجر المثل على المقرض؛ لأن المستقرض إنما أسكنه في داره عوضاً عن منفعة القرض لا مجاناً".
(ج:6/63)

وفی فی اعلاء السنن:

" قال ابن المنذر: أجمعوا علی أن المسلف إذا شرط علی المستسلف زیادة أو هدیة فأسلف علی ذلک، إن أخذ الزیادة علی ذلک ربا"

(باب کل قرض جر منفعةً، کتاب الحوالة، ج:14/513ط: إدارة القرآن)

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی
Print Full Screen Views: 559
easy paisa account bijli kay bill ki adaigi par company ki taraf say milnay wali raqam istimal karne ka hukum

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Loan, Interest, Gambling & Insurance

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2022.