عنوان: بے وضو یا ناپاک (جنابت والے) شخص نے عمرہ کا طواف کرلیا(106136-No)

سوال: اگر کوئی شخص بے وضو یا جنابت کی حالت میں عمرہ کا طواف کرلے، تو اس صورت میں اس کے لئے کیا حکم ہے؟

جواب: اگر کوئی شخص بے وضو یا جنابت (ناپاکی) کی حالت میں عمرہ کا پورا طواف کرلے یا اکثر کرلے یا کم از کم ایک چکر اس حالت میں کر لے، تو اس صورت میں اس پر دم دینا واجب ہوگا، البتہ اگر پاکی حاصل کرنے کے بعد عمرہ کا طواف دہرا لے گا، تو اس پر سے دم ساقط ہوجائے گا۔

دلائل:

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


کما فی غنیۃ الناسک:

ولو طاف للعمرة كله أو أكثره أو أقله ، ولو شوطا جنبا ، أو حائضا ، أو نفساء، أو محدثا، فعليه شاة ........... ولو أعاده سقط عنه الدم .

(المطلب الرابع في ترك الواجب في طواف العمرة، ص: 276، ط: ادارۃ القرآن)

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی
Print Full Screen Views: 347
bay wozu na pak janabat walay shakhs nay umra ka tawaf karlia

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Umrah

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2022.