عنوان: کیا عرفات کے میدان میں حیض یا نفاس والی عورت سورۃ الفلق، سورۃ الناس اور قرآنی دعائیں پڑھ سکتی ہے؟(106198-No)

سوال: سوال یہ ہے کہ اگر کوئی عورت عرفات کے میدان میں ہو، اور وہ حیض یا نفاس کی حالت میں ہو، تو کیا وہ ان حالتوں میں سورۃ الفلق، سورۃ الناس اور قرآنی دعائیں پڑھ سکتی ہے یا نہیں؟

جواب: واضح رہے کہ جو عورت حیض یا نفاس کی حالت میں ہو، تو اس کے لئے قرآن کریم کی کوئی بھی آیت یا سورت تلاوت کی نیت سے پڑھنا جائز نہیں ہے، چاہے وہ میدانِ عرفات میں ہو یا کسی اور جگہ ہو، البتہ قرآن مجید کی وہ آیت یا سورت جس میں دعا یا اللہ تعالی کی حمد و ثناء ہو، دعا یا ذکر کی نیت سے پڑھنا چاہے، تو پڑھ سکتی ہے، البتہ حیض یا نفاس کی حالت میں قرآنی دعاؤں کو نہ چھوئے، زبانی پڑھے یا اس طرح پڑھے کہ ان دعاؤں پر ہاتھ نہ لگے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

کما فی مراقی الفلاح مع حاشیۃ الطحطاوی:

و" يحرم "قراءة آية من القرآن" إلا بقصد الذكر إذا اشتملت عليه لا على حكم أو خبر۔۔۔"و" يحرم "مسها" أي الآية لقوله تعالى: {لا يمسه إلا المطهرون} سواء كتب على قرطاس أو درهم أو حائط

قوله: "إلا بقصد الذكر" أي أو الثناء أو الدعاء إن اشتملت عليه فلا بأس به في أصح الروايات قال في العيون ولو أنه قرأ الفاتحة على سبيل الدعاء أو شيئا من الآيات التي فيها معنى الدعاء ولم يرد به القرآن فلا بأس به اهـ واختاره الحلواني

(ج: 1، ص: 142، ط: دار الکتب العلمیۃ)


واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی
Print Full Screen Views: 427
kia arafat kay maidan mai haiz ya nifas wali orat soorah al falaq sorah alnnas or qurani duain parh sakti hai?

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Women's Issues

Copyright © AlIkhalsonline 2021. All right reserved.

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com