عنوان: حیض و نفاس کی حالت میں مزدلفہ جانے کا حکم(106215-No)

سوال: میں اپنی بیوی کے ساتھ حج کے لئے مکہ مکرمہ آیا ہوا ہوں، میری بیوی کو حیض کے ایام شروع ہوگئے ہیں، سوال یہ ہے کہ کیا میری بیوی اس حالت میں مزدلفہ جاسکتی ہے یا نہیں؟

جواب: حیض یا نفاس والی عورت کے لئے مزدلفہ جانا جائز ہے، کیونکہ مزدلفہ جانے کے لئے حیض یا نفاس سے پاک ہونا شرط نہیں ہے، البتہ حیض یا نفاس والی عورت مزدلفہ میں جاکر نماز نہیں پڑھے گی، بلکہ مزدلفہ میں قیام کا وقت تلبیہ، دعاء اور ذکر و اذکار میں صرف کرے گی۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

کما فی بدائع الصنائع:

ولا تشترط له الطهارة عن الجنابة و الحيض ؛ لأنه عبادة لاتتعلق بالبدن فتصح من غير طهارة کالوقوف بعرفة ورمي الجمار۔۔الخ

(ج: 2، ص: 321، ط: رشیدیۃ)

وفی الھندیۃ:

(منها) أن يسقط عن الحائض والنفساء الصلاة فلا تقضي. هكذا في الكفاية۔۔۔ويستحب للحائض إذا دخل وقت الصلاة أن تتوضأ وتجلس عند مسجد بيتها تسبح وتهلل قدر ما يمكنها أداء الصلاة لو كانت طاهرة. كذا في السراجية

(ج: 1، ص: 38، ط: دار الفکر)


واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی
Print Full Screen Views: 223
haiz wa nifas ki halat mai muzdalifa janay ka hukum

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Hajj (Pilgrimage)

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © AlIkhalsonline 2021.